شبِ فراق کی قامت ہے کس قیامت کی

ٹھہر کے دیکھے تو رُک جائے نبض ساعت کی

شبِ فراق کی قامت ہے کس قیامت کی